کورونا وائرس سے جنگ میں نیتی آیوگ نے کیا غیر سرکاری تنظیموں کو متحرک

کورونا وائرس سے جنگ میں نیتی آیوگ نے کیا غیر سرکاری تنظیموں کو متحرک
کورونا وائرس سے جنگ میں نیتی آیوگ نے کیا غیر سرکاری تنظیموں کو متحرک

نئی دہلی: کورونا وبا سے لڑنے کے لئے ملک میں کوششیں کی جارہی ہیں۔ ان کوششوں پر نظر رکھنے کے لئے ایک بااختیا رگروپ (چھ) سبھی ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام ریاستوں کے 700 اضلاع کے ضلع مجسٹریٹ کے ساتھ کام کر رہا ہے۔ اس میں غیر سرکاری تنظیموں اور سول سوسائٹی تنظیموں کی مدد اور تعاون سے متعلق صورت حال پر نظر رکھے ہوئے ہے۔

اس گرو پ کو نیتی آیوگ کے چیف ایگزیکٹو آفیسر امیتابھ کانت کی سربراہی میں تشکیل دیا گیا ہے۔ اس بااختیار گروپ نے 92 ہزار غیر سرکاری تنظیموں کو ریاستی حکومتوں اور ضلع انتظامیہ کی مدد کرنے کے لئے موبیلائز کیا ہے۔ اس کے لئے سبھی ریاستوں کے چیف سکریٹریوں کو ریاستی سطح پر نوڈل افسران مقرر کرنے کو کہا گیا تھا۔ ان غیر سرکاری تنظیموں اور سول سوسائیٹی کے ساتھ روابط قائم کرنا اس کا اہم کام تھا۔ وسائل و نیٹ ورک سے متعلق کسی قسم کی پریشانی کو بھی دور کرنا تھا۔ تمام ریاستوں نےان کے ساتھ رابطہ قائم کرنے کے لئے ایسے افسروں کو مقرر کردیا ہے۔

مسٹر کانت نے 4 اپریل پیر کے دن پریس کانفرنس میں بتایا کہ ملک کے 112 انتہائی پسماندہ اضلاع میں نیتی آیوگ نے تجرباتی طور پر “آکانشی ضلع پروگرام” کی شروعات کی تھی۔ ابھی تک ان اضلاع میں ملک میں کورونا کے کل معاملوں کا دو فیصد سے بھی کم انفکشن دیکھا گیا ہے۔ ان میں سے چھ اضلاع ایسے ہیں جہاں کورونا کے پہلے معاملے 21 اپریل کے بعد کے دیکھے گئے تھے۔ ان میں بارہمولہ (62)، نوح (57)، رانچی (55) وائی ایس آر (55) کپواڑہ (47) اور جیسلمیر(34) ہیں۔
انہوں نے بتایا کہ نیتی آیوگ نے ان اضلاع میں کورونا کے معاملوں کو روکنے کے لئے اپنی سطح پر متعدد فعال اقدام کئے ہیں۔ ملک کے 500 سے زیادہ اضلاع میں ریڈ کراس سوسائٹی آف انڈیا کے 40 ہزار سے زیادہ رضاکاروں نے ضلع انتظامیہ کے ساتھ فعال طور پر تعاون کیا ہے۔ انہوں نے 33 مقامات پر قرنطینہ کی سہولت، آئیسولیشن مراکزقائم کئے ہیں اور تقریباً ساڑھے پانچ کروڑ روپے کے وینٹیلیٹر، ماسک اور پی پی ای کے عطیہ کی سہولت فراہم کی ہے۔ اس کے علاوہ اس گروپ نے یونیسیف کو 10 ہزار وینٹیلیٹر اور ایک کروڑ پی پی ای کٹ خریدنے کے عمل میں تیزی لانے کو کہا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ سبھی غیر سرکاری تنظیموں کو کہا گیا تھا کہ وہ لامحدود مقدار میں نیشنل فوڈ کارپوریشن سے سبسڈی کی بنیاد پر 22 اور21 روپے فی کلو گرام کی شرح سے چاول اور گیہوں اٹھائیں۔ تاکہ ضرورت مندوں تک راشن تقسیم کیا جاسکے اور ملک میں کوئی بھی بھوکا نہ رہے۔

تعارف: hamslive

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*